Official Website of Allama Iqbal
  bullet سرورق   bullet سوانح bulletتصانیفِ اقبال bulletگیلری bulletکتب خانہ bulletہمارے بارے میں bulletرابطہ  

علامہ اقبال کے 145ویں یوم ولادت پر گورنمنٹ مرے کالج سیالکوٹ میں شان دار تقریب

علامہ اقبال اور فیض احمد فیض کی مادر علمی اور برصغیر پاک و ہند کی معروف تعلیمی درس گاہ گورنمنٹ مرے کالج سیالکوٹ میں علامہ اقبال کے 145 ویں یوم ولادت کے موقع پر ایک یادگار تقریب مورخہ 15 نومبر 2022ء بروز منگل بوقت 11 بجے صبح علامہ اقبال کے استاد گرامی سے منسوب ہال مولوی میر حسن ہال میں انعقاد پذیر ہوئی۔اس تقریب کے انتظام وانصرام کا سہرا شعبہ اردو اور شعبہ اسلامیات کے سر جاتا ہے ۔ اس فکری نشست کا عنوان تھا۔ "افکار اقبال : نژاد نو کے لیے"۔ اس فکری نشست کی مقررہ ڈاکٹر بصیرہ عنبرین صاحبہ ڈائریکٹر اقبال اکیڈمی پاکستان ،لاہور تھیں۔جو معروف اقبال شناس ،محقق اور نقاد کی حیثیت سے اپنی ایک منفرد پہچان رکھتی ہیں ۔آپ کو اقبال اکیڈمی کی اولین خاتون ڈائریکٹر ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔اقبال شناسی کے حوالے سے آپ کی تنقیدی وتحقیقی کتب "مقائسہ ارمغان حجاز(فارسی)،تضمینات اقبال ،محسنات شعر اقبال ،اقبال -وجود زن سے ہے تصویر کائنات برصغیر پاک وہند اور بیرون پاکستان داد تحسین پا چکی ہیں ۔ ڈاکٹر بصیرہ عنبرین صاحبہ اور دیگر معزز مہمانان معظم کی آمد پر انھیں پھولوں کے گلدستے پیش کیے گئے ۔تقریب کی نظامت کے فرائض پروفیسر ندیم اسلام سلہری صاحب،اسسٹنٹ پروفیسر شعبہ اردو نے بہ احسن وخوبی انجام دیے ۔تقریب کا باقاعدہ آغاز اللہ کے بابرکت نام سے ہوا ۔حافظ محمد شعیب نے تلاوت کلام پاک سے دلوں کو منور کیا ۔نعت مقبول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پیش کرنے کی سعادت منیبہ صدیق کے حصے میں آئی ۔مرے کالج سیالکوٹ کی روایت کو برقرار رکھتے ہوئے مریم لیاقت نےکلام اقبال مترنم پیش کر کے داد سمیٹی ۔بعد ازاں مہمان مقررہ کو دعوت خطاب دی گئی ۔ڈاکٹربصیرہ عنبرین صاحبہ نے اپنی گفتگو کے آغاز میں بے پناہ مسرت کا اظہار کیا کہ وہ پہلی مرتبہ مرے کالج تشریف لائیں ہیں لیکن جس انداز میں ان کا شان دار استقبال کیا گیا ہے اس کے لیے میں پرنسپل ادارہ ہذا ڈاکٹر محمد نواز صاحب،کالج انتظامیہ،سیکرٹری جنرل اور وائس چیئرمین سیرت سٹڈی سنٹر کی بے حد شکر گزار ہوں ۔ڈاکٹر بصیرہ عنبرین صاحبہ نے اپنے لیکچر کا آغاز علامہ اقبال کی ابتدائی زندگی سے کرتے ہوئے ان کے سفر یورپ تک کے حالات و واقعات کا نقشہ بڑے دلکش انداز میں حاضرین مجلس کے سامنے پیش کیا۔انھوں نے فرمایا کہ جب اقبال1905 میں یورپ گئے تو ان کی شاعری کا رخ بدل گیا ۔ان کے افکار ونظریات میں ایک بڑی واضح تبدیلی نے جنم لیا ۔ اقبال کے مخاطبین کے حوالے سے بتایا کہ وہ نسل نو سے مخاطب تھے. ڈاکٹر صاحبہ کی گفتگو کا محور توحید و رسالت، عجمی تصوف کے اثرات، خودی، مرد مومن سمیت دیگر پہلو تھے ۔انھوں نے نسل نو کے نام اقبال کے پیغام پر سیر حاصل گفتگو کرتے ہوئے اپنی بحث کو بہت احسن انداز میں سمیٹا ۔جس کی حاضرین محفل نے کھل کر داد دی۔ اس فکری نشست کے مہمانان گرامی میں چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری سے وابستہ افراد جن میں خواجہ مسعود صاحب (فارورڈ سپورٹس،سیالکوٹ کے مالک جوکہ حالیہ سیرت سٹڈی سنٹر سیالکوٹ کے وائس چیئرمین اور سیالکوٹ ائرپورٹ کے چیئرمین بھی ہیں)، خواجہ خاور انور صاحب سابقہ صدر ایوان صنعت وتجارت سیالکوٹ ،معروف صنعت کار داؤد سائر صاحب سمیت دیگر اہم شخصیات نے شرکت کی. اس فکری محفل کے انعقاد کا سہرا جناب اسد اعجاز صاحب سیکرٹری جنرل سیرت سڈی سنٹر سیالکوٹ کو جاتا ہے۔تقریب ہذا میں معروف قانون دان ،شاعر ،کالم نگار محترم آصف بھلی صاحب نے بھی خصوصی شرکت کی ۔تقریب کے اختتام پر گورنمنٹ مرے کالج سیالکوٹ کے پرنسپل ڈاکٹر محمد نواز صاحب نے مہمان مقررہ اور سیالکوٹ کی معروف صنعتی شخصیات کا اس فکری نشست میں شمولیت پر شکریہ ادا کیا. تقریب میں پروفیسر نصیر غازی صاحب وائس پرنسپل ادارہ ہذا ،پروفیسر مہر الیاس صاحب ،پروفیسر سجاد بھٹی صاحب ،پروفیسر شاہد چوہان صاحب ،پروفیسر شہباز حیدر صاحب ،ڈاکٹر طیب عثمانی صاحب ،پروفیسر کاشف علی صاحب اور دیگر معزز اساتذہ کرام نے شرکت کی ۔کالج ہال میں طلبا و طالبات کی کثیر تعداد موجود تھی جنھوں نے بڑی یکسوئی سے مہمان مقررہ کو سماعت کیا ۔ اس یادگار نشست کی کامیابی میں پروفیسر ندیم اسلام سلہری صاحب اور ڈاکٹر طیب عثمانی صاحب کی مساعی جمیلہ داد کی مستحق ہے ۔شعبہ اردو واسلامیات گورنمنٹ مرے کالج سیالکوٹ اور سیرت سٹڈی سنٹر سیالکوٹ کے احباب نے بھرپور تعاون کیا ۔



   

   

   

   

   

   

   
   
   
اقبال اکادمی پاکستان